لاہور  (ویب ڈیسک)

صوبہ خیبر پختونخوا نے مختلف شعبوں بالخصوص توانائی، سیاحت اور پہاڑی علاقوں میں سولرائزیشن میں کامیابی کے ساتھ 8 بلین ڈالر سے زائد کی غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کیا ہے جس سے پاکستان میں بین الاقوامی معیار کی سیاحت کی راہ ہموار ہو گی۔ اس بات کا انکشاف جمعرات کو یو کے پاکستان بزنس کونسل کے چیئرمین میاں کاشف اشفاق کے ساتھ ویڈیو کانفرنس میں دبئی میں مقیم پاکستانی بزنس ٹائیکون ندیم اللہ انجم، سی ای او، الجموم ہارڈ ویئر ٹریڈنگ ایل ایل سی نے کیا۔ ندیم اللہ انجم نے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ دبئی ایکسپو کے دوران تقریباً 44 غیر ملکی سرمایہ کاروں نے مربوط ٹورازم زونز،  ضلع صوابی کے علاقے ہندا میں واٹر سپورٹس، انرجی اینڈ پاور، فوڈ پراسیسنگ، لائیو سٹاک اور انفراسٹرکچر میں کافی دلچسپی ظاہر کی ہے۔ ان سرمایہ کاروں میں متحدہ عرب امارات میں مقیم پاکستانی بھی شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ پی ٹی آئی کی صوبائی حکومت کی بہترین و نتیجہ خیز منصوبہ بندی کا نتیجہ تھا کہ ایکسپو میں صرف وہی منصوبے دکھائے گئے جن کی قابل اعتماد اور مستند فزیبلٹی رپورٹس مکمل اور سرمایہ کاری کے لیے تیار ہیں اور وہ سرمایہ کاروں کی توجہ کا مرکز بنے جنہوں نے مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کیے۔ مزید یہ کہ کے پی حکومت نے تمام غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ون ونڈو اور دیگر متعلقہ سہولیات کی مکمل یقین دہانی بھی کرائی۔ میاں کاشف اشفاق نے شرکاء کو بتایا کہ کے پی پاکستان کا واحد صوبہ ہے جس نے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے ذریعے سوات تک ملک کی پہلی موٹر وے تعمیر کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے صوبہ خیبر پختونخوا میں غیر ملکی اور مقامی سرمایہ کاروں کو مراعاتی پیکج کیلئے واضح ہدایات جاری کی ہیں اور وہ ذاتی طور پر ان کی ہدایات پر عمل درآمد کی نگرانی کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان بہترین قدرتی مناظر اور خوبصورتی سے مالا مال ہے جس کا اعتراف بین الاقوامی ٹورسٹ آپریٹرز نے بھی کیا ہے اور یہ ٹورزم ہمسایہ ممالک کے مقابلے میں زیادہ سستی ہے۔ ندیم اللہ انجم نے میاں کاشف اشفاق کو، جو پاکستان فرنیچر کونسل کے سی ای او بھی ہیں، اپنی ٹیم کے ساتھ یو اے ای کا دورہ کرنے کی دعوت دی تاکہ پاکستان کے ہاتھ سے تیار کردہ دنیا کے بہترین فرنیچر کی نئی مارکیٹوں کو تلاش کیا جا سکے۔

By Editor