کراچی  (ویب ڈیسک)

رائس ایکسپورٹرز شپنگ کے مسائل کے حل کیلئے اپنی مدد آپ کے تحت کوشش کر رہے ہیں، ان خیالات کا اظہار رائس ایکسپورٹرز ایسو سی ایشن آف پاکستان کے سینئر وائس چیئرمین محمد انور میانور کی سر براہی میں گذشتہ روز وفد نے پورٹ قاسم ٹرمینل اور بلک ویسل کے جہاز کے دورے کے موقع پر کیا۔ اس موقع پر REAPکے سابق چیئرمین عبد الرحیم جانو، رفیق سلیمان، عبد القیوم پراچہ، صفدر مہکری، ممبران مینیجنگ کمیٹی سلمان پراچہ، مہیش راجا منگلانی، انعام الحق، عبد الرشید جان محمد، گر مکھ داس کے علاوہ بڑی تعداد میں رائس ایکسپورٹرز بھی موجود تھے۔ عبد الرشید جان محمد سابق ممبر مینیجنگ کمیٹی REAPکی جانب سے دیئے گئے ظہرانے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے محمد انور میانور نے کہا کہ اس وقت رائس ایکسپورٹ سیکٹر کو بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے جس میں کنٹینر کی دستیابی بہت بڑا مسئلہ بنا ہوا ہے جس کی وجہ سے پاکستانی چاول کی بر آمدات کافی متاثر ہورہی تھیں۔ پاکستانی رائس ایکسپورٹرز نے اپنی مدد آپ کے تحت بلک جہازکی چارٹرنگ کر وائی ہے اور اس جہاز میں رائس ایکسپورٹرز کے کارگو کی لوڈنگ ہورہی ہے جو افریقی ممالک کو ایکسپورٹ کیا جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ رائس ایکسپورٹرز اپنی مدد آپ کے تحت چاو ل کی بر آمدات بڑھانے کیلئے اقدامات کر رہے ہیں تاکہ پاکستانی چاول کی بر آمدات میں نمایاں اضافہ ہو سکے۔ انہوں نے وارت بحری امور سے گذارش کی کہ معاملات میں نئی پالیسی بنائی جائے جو ایکسپورٹرز کیلئے فائدہ مند ہو اور اس پر جلد از جلد عمل در آمد کیا جائے۔ اس حوالے سے وفاقی سیکریٹری تجارت صالح فاروقی پہلے ہی سیکریٹری وزارت بحری امور کو خط ترسیل کرچکے ہیں کہ کوئی مناسب حل جلد ا جلد نکالا جائے۔ انہوں نے وزارت بحری امور سے پر زور اپیل کرتے ہوئے کہا کہ شپنگ کمپنیاں من مانے کرائے وصو ل کر رہے ہیں اور بلاجواز ڈیمرج کا مطالبہ کر رہی ہیں اور شٹ آٹ اور رول اوور پر چارجز لے رہی ہیں۔ برائے مہربانی اس طرف توجہ دی جائے اور جلد از جلد کوئی حل نکالا جائے۔

By Editor