پاکستان اسپین کے ذریعے یورپی یونین کے ساتھ برآمدات کو بہتر فروغ دے سکتا ہے مرزا سلمان بابر بیگ
باہمی تجارت بہتر کرنے کیلئے دونوں ممالک کے نجی شعبوں کے درمیان مضبوط روابط ضروری ہیں۔ شکیل منیر

اسلام آباد (ویب نیوز )

اسپین کے شہر بارسلونا کیلئے نامزد پاکستان کے قونصل جنرل مرزا سلمان بابر بیگ نے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کا دورہ کیا اور چیمبرکے صدر محمد شکیل منیر کے ساتھ پاکستان و اسپین کے تجارتی تعلقات کو مزید بہتر کرنے کے امور پر تبادلہ خیال کیا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان اسپین کے ساتھ قریبی تعاون قائم کر کے یورپی یونین کے ساتھ اپنی برآمدات کو بہتر فروغ دے سکتا ہے۔ انہوں نے تاجر برادری کو یقین دلایا کہ وہ اسپین کے ساتھ پاکستان کی تجارت و برآمدات کو فروغ دینے کے لیے کردار ادا کریں گے اور اس سلسلے میں نجی شعبے کے ساتھ مکمل تعاون کریں گے کیونکہ دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ تجارت کو فروغ دینے کی عمدہ صلاحیت موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ تاجر برادری اسپین کے ساتھ تجارت و برآمدات کو بہتر بنانے کی راہ میں حائل رکاوٹوں کی نشاندہی کرے تاکہ وہ ان کو دور کرنے کے لیے حکومت کے ساتھ مل کر کام کر سکیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ آئی سی سی آئی سمیت پاکستان کے چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے ساتھ بروقت معلومات شیئر کرنے کی کوشش کریں گے تاکہ نجی شعبہ سپین کے ساتھ برآمدات کو فروغ دینے کے ممکنہ مواقعوں سے فائدہ اٹھا سکے۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ پاکستان کے اہم ایون صنعت و تجارت کے ساتھ رابطے میں رہنے کی کوشش کریں گے تاکہ وہ ہسپانوی مارکیٹ میں پاکستانی مصنوعات کی طلب سے ان کو آگاہ رکھیں اور پاکستانی برآمد کنندگان ممکنہ مواقعوں سے فائدہ اٹھا سکیں
اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر محمد شکیل منیر نے کہا کہ پاکستان اور اسپین کے درمیان دوطرفہ تجارت دونوں ممالک کی اصل صلاحیت سے کافی کم ہے لہذا انہوں نے کہا کہ باہمی تجارت کو بہتر کرنے کیلئے دونوں ممالک کے نجی شعبوں کے درمیان مضبوط کاروباری روابط کو فروغ دینا ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسپین میں پاکستانی مصنوعات کے بارے میں آگاہی کا فقدان تجارت کی راہ میں ایک بڑی رکاوٹ ہے جسے دور کر کے اسپین کی مارکیٹ میں بہتر رسائی حاصل کی جا سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اسپین کو ماربل و گرینائٹ، پھل و سبزیاں، ایگرو فوڈ، فارماسیوٹیکل، کھیلوں کا سامان، چمڑے کی مصنوعات، آلات جراحی اور آئی ٹی مصنوعات سمیت متعدد مصنوعات برآمد کر سکتا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ بارسلونا، اسپین میں پاکستان قونصلیٹ جنرل کو چاہیے کہ وہ ہسپانوی مارکیٹ میں پاکستانی مصنوعات کی مانگ کے بارے میں مارکیٹ ریسرچ کرے اور ان رپورٹس کو چیمبر کے ساتھ شیئر کرے تاکہ ہمارے ممبران ان سے فائدہ اٹھا سکیں۔
جمشید اختر شیخ سینئر نائب صدر اور محمد فہیم خان نائب صدر آئی سی سی آئی نے کہا کہ پاکستان کاروبار اور سرمایہ کاری کے لیے ایک پرکشش مارکیٹ ہے لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ ہسپانوی کمپنیوں کو سی پیک سمیت پاکستان کی معیشت کے مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری اور جوائنٹ وینچرز کے مواقع تلاش کرنے کی حوصلہ افزائی کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان یورپی یونین کو زیادہ تر ٹیکسٹائل اور ملبوسات برآمد کرتا ہے لہذا انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ بہتر نتائج کے حصول کے لیے اسپین کے ساتھ برآمدات میں تنوع لانے کے لیے نجی شعبے کے ساتھ بھرپور تعاون کرے۔
محمد شبیر، چوہدری محمد علی، راجہ امتیاز، محترمہ پروین خان، محترمہ ناصرہ علی اور دیگر نے بھی اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کیا اور پاکستان و سپین کے درمیان دوطرفہ تجارتی اور اقتصادی تعلقات کو مزید بہتر کرنے کے لیے مفید تجاویز پیش کیں۔

By Editor