برآمدی معیشت کی بنیاد رکھنے کیلئے جامع پالیسیاں مرتب کی جائیں،کارپٹ ایسوسی ایشن

لاہور (ویب  نیوز)پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نے کہاہے کہ بیرونی قرضوں اوردوسرے ممالک سے عارضی امداد کے بل بوتے پر معیشت کی ترقی خود کو دھوکہ دینے کے مترادف ہے ،جب تک خود انحصاری کی طرف پیشرفت نہیں کی جائے گی پاکستان مسائل کی دلدل سے باہر نہیں نکل سکتا،برآمدی معیشت کی بنیاد رکھنے کیلئے جامع پالیسیاں مرتب کی جائیں اور اس کیلئے مینو فیکچررز اور برآمدکنندگان کی مکمل سرپرستی کی جائے ۔ ان خیالات کااظہار کارپٹ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے چیئر پرسن پرویز حنیف ،پاکستان کارپٹ ایسوسی ایشن کے گروپ لیڈر عبداللطیف ملک، وائس چیئرمین اعجاز الرحمان، سینئر ایگزیکٹو ممبر ریاض احمد اورسعید خان نے اپنے مشترکہ بیان میں کیا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ قرضوں کی شرح جی ڈی پی کے مقابلے میں مسلسل بڑھتی جارہی ہے،اس وقت وفاقی حکومت کے اپنے اخراجات ملک کی مجموعی قومی آمدن کا 5.2فیصد ہو چکے ہیں جسے کم کرنے کے لیے کوئی حکمت عملی مرتب نہیں کی گئی۔انہوں نے کہا کہ حکومت برآمدات بڑھانے کی طرف توجہ دے اوربرآمدی مینو فیکچرننگ کیلئے جو بھی مال درآمدہوتا ہے اس پر ٹیکسزمیں چھوٹ دی جائے تاکہ پیداواری لاگت کم ہو سکے اور ہم عالمی منڈیوں میں دوسرے ممالک کا مقابلہ کر سکیں۔ ایسوسی ایشن کے رہنمائوںنے کہاکہ حکومت آئی ایم ایف کی شرائط پر ہاتھ باندھ کر عملدرآمدکرنے کی بجائے اسے پاکستان کی مشکلات سے آگاہ کرے

By Editor